آج کا اخبار

موسیقی سے ادب نکال دیا جائے تویہ بے معنی ہیں، شوقیہ گلوکاروں نے فن موسیقی کو نقصان پہنچایا ،گلوکارہ آیت شیخ

ہماری موسیقی دنیا بھر میں جانی مانی جاتی ہے،گلوکاری کا بچپن سے شوق تھا اب جنون بن چکا ہے ، گلوکارہ  آیت شیخ کی خصوصی گفتگو

گلوکارہ آیت نفیس شیخ  نے  نئے گلوکاروں کو مذاق قرار دے دیا ۔ کہا کہ ہماری موسیقی جسے دنیا بھر میں جانا مانا جاتا ہے ۔ مجھے گلوکاری کا بچپن سے شوق تھا اب جنون بن چکا ہے اسے آجکل کے شوقیہ گلوکاروں نے مذاق بنا دیا ۔ ایک انٹرویو  میں آیت نفیس کا کہنا تھا کسی بھی کام کو کرنے کیلئے اس کا سیکھنا ضروری ہوتا ہے ۔ موسیقی روح کی غذا ہے لیکن جب نت نئی ترکیبیں متعارف کرائی گئیں تو اس سے نقصان ہوا  اور جگ ہنسائی کا باعث بن رہا ہے ۔

مزید کہا کہ ا ستاد نذر حسین ، نثار بزمی ، ماسٹر عنایت حسین ، وجاہت عطرے اور نیاز احمد وہ عظیم نام ہیں جن کی بنائی گئیں دھنیں امر ہوئیں پڑوسی ملک میں کاپی کی گئیں میرے خیال میں کسی خوب صورت کمپوزیشن  کو کاپی کرنا بری بات نہیں یہ تو ایک اعزاز کی بات ہے کہ ہماری دھنیں کاپی کی جاتی ہیں ۔ آیت شیخ نے کہا  کہ موسیقی سے اگر ادب نکال دیا جائے تو یہ فن بے معنی ہو جاتا ہے ۔فنکار ایک عہد کا نام ہے ۔

اگر موسیقی اور موسیقار کا ادب دیکھنا ہے تو حالیہ وائرل ہونیوالی نصیبولال اور عابدہ پروین صاحبہ کی ویڈیو دیکھیں جس میں دونوں نے ایک دوسرے کو بے حد احترام دیا ۔ دونوں ہمارے  ملک کا اثاثہ ہیں اور ایک اکیڈمی کا درجہ رکھتے ہیں ۔۔۔

[ad_2]
Source link

Related Articles

Back to top button