Kashmir latest news 15

محکمہ جنگلات کمزوروں پرہی چڑھائی کرنے لگا

کوٹلی(ویب ڈیسک)محکمہ جنگلات کمزوروں پرہی چڑھائی کرنے لگاہم 1965 کے مہاجرین کو ایک کمرہ بنانے سے روکاجارہاہے دوسری طرف کوئی بھی استقاق نہ رکھنے والوں کو کھلی چھٹی دے رکھی ہے۔رقبہ جنگلات کے کمباٹ نمبر14کے خسرہ نمبر1277کارقبہ جوکہ 175کنال 5مرلہ پرمشتمل ہے۔1965میں حکومتی پالیسی کے مطابق 4خاندانوں کی کالونی نبی جن میں ہمارے نانا بابانورعالم،مولوی محمدنزیر،طلیل حسین شاہ، خادم حسین شامل تھے۔

باقی 3خاندانوں کوپناگ کے ایک بالادست طبقے نے یکے بعددیگرے نکال کراپنے رشتے داروں کویا اپنے ہمنواؤں کو آبادکردیاجوکہ نہ ہی مہاجرہیں اورنہ ہی پناگ شریف کے سکونتی ہیں جنہوں نے بڑے بڑے محلات بنالیے ہیں اورکچھ بنارہے ہیں۔

ان خیالات کا اظہاربزرگ خاتون سیدبیگم کے بیٹے بشارت خان ولدمرزامحمدخان مہاجرکالونی نمبر1پناگ شریف نے صحافیوں سے گفتگوکے دوران کیا۔انہوں نے کہا کہ ان میں سے ایک نومحکمہ جنگلات کے رقبے پرتجارت کررہاہے جوکہ 3،2جگہ مکان بناکرفروخت کرچکاہے۔ جس کانام قیوم شاہ ولدصادق شاہ ہے اورایک کوسپریم کورٹ نے بے دخلی کاآرڈردےرکھاہے جوکہ محکمہ کی ملی بھگت سے ابھی موقع موجودہے جوکہ سجادشاہ، میلادشاہ،عباس شاہ پسران عالم شاہ ہے جو ہمارے گھرسے صرف10 گزکے فاصلے پرواقع ہے جن کی وراثت موضع گواں میں ہے۔الطاف شاہ، شبیرشاہ،مسکین شاہ اورذاکرشاہ پسران طالب شاہ جن کی وراثت بھی آزادکشمیرکے علاقے میں ہے اس کے علاوہ ایک خاندان مزمل شاہ،امجدشاہ، نثارشاہ، وقارشاہ پسران اخترشاہ جو پلندری کے گاؤں ٹوپ ک ے وراثتی ہیں۔

یہ سب لوگ 1990کے بعدیہاں جنگلات کے رقبے پرقابض ہونے کااستقاق نہیں رکھتے۔جہاں تک ہمارامسئلہ توہم عدلیہ،انتظامیہ اورعوام علاقہ پناگ شریف کے مشکورہیں جنہوں نے ہر موقع پرہمارے حق کو تسلیم کیا۔ہم آزادحکومت اورمحکمہ جنگلات سے مطالبہ کرتے ہیں کہ ان سب ناجائزقابضین سے جنگلات کا رقبہ خالی کروایاجائے جنہوں نے صفدرشاہ سے ملکرہمیں اغواء کرکے ہماراگھرگرایااورہماراساراسامان بھی لوٹ لیا۔ اگرہمارے مطالبات پرایک ہفتے کے اندرپیش رفت نہ ہوئی تو ہماراپوراخاندان آفس کے سامنے تادم مرگ بھوک ہڑتال کریں گے یا پھرخودسوزی کریں گے جس کی تمام ترذمہ داری محکمہ جنگلات اوران قبضہ گروپ پر ہوگی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں