بھارت میں تاریخی مسجد کی شہادت پر پاکستان کی شدید مذمت 32

بھارت میں تاریخی مسجد کی شہادت پر پاکستان کی شدید مذمت

اسلام آباد : پاکستان نے ہریانہ میں تاریخی مسجد کی شہادت کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے عالمی برادری سے اپیل کی ہے کہ انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں پر بھارت کو کٹہرے میں لایاجائے۔

تفصیلات کے مطابق ترجمان دفتر خارجہ عاصم افتخار احمد نے اپنے بیان میں کہا کہ ہریانہ میں بی جے پی حکومت کے دور حکومت میں ایک اور تاریخی مسجدکی شہادت کی مذمت کرتےہیں بی جے پی، آر ایس ایس حکومت قابل مذمت اقدامات میں ملوث ہے، بھارتی حکام عدلیہ کی ملی بھگت سے قابل مذمت اقدامات کررہے ہیں، ہندتواکے زیراثر بھارتی حکومت مسلسل مسلمانوں کونشانہ بنارہی ہے۔

ترجمان دفترخارجہ نے کہا کہ بھارت میں مسلمانوں اور ان کے مذہبی مقامات کو نشانہ بنایا جارہا ہے، جس کے نتیجے میں نام نہاد اور سب سے بڑی جمہوریت کے ماتھے پر نہ مٹنے والا داغ لگ چکا ہے، مسلمانوں، عبادتگاہوں، ثقافتی یادگاروں کو کشمیر میں بھی نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

دفتر خارجہ کے ترجمان عاصم افتخار نے کہا کہ بھارتی سپریم کورٹ نےنومبر 2019 میں متنازع فیصلہ دیا، انتہاپسندوں کو تاریخی بابری مسجد کی جگہ مندر بنانے کی اجازت دی گئی، انتہا پسند جنونیوں نے 1992 میں تاریخی بابری مسجد کو شہید کیا تھا، سرعام مسجد شہید کرنیوالے مجرموں کو عدلیہ کی ملی بھگت سے بری کیاگیا۔

ترجمان دفترخارجہ نے اپنے بیان میں کہا کہ مسلمانوں کو عبادتگاہوں میں شہید کرنے کے واقعات بھی ہوچکے، 2002 میں گجرات، فروری 2020 میں دہلی میں مسلمانوں کاقتل عام ہوا، ان جرائم کاارتکاب کرنیوالوں کیخلاف کوئی عدالتی کارروائی نہیں کی گئی۔

عاصم افتخار نے کہا کہ پاکستان عالمی برادری، اقوام متحدہ، او آئی سی، انسانی حقوق کی تنظیموں سے مطالبہ کرتا ہے کہ انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں پربھارت کو کٹہرے میں لایا جائے، بھارت تمام اقلیتوں بشمول مسلمانوں کی حفاظت کو یقینی بنائے، بھارت ان کے مذہبی وثقافتی مقامات کا تحفظ بھی یقینی بنائے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں