shehryar afridi latest news 14

کشمیر اور جوہری پروگرام پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہو سکتا:شہر یار خان آفریدی

اسلام آباد ۔ (نیوز ایجنسی) پارلیمانی کشمیر کمیٹی کے چیئرمین شہر یار خان آفریدی نے کہا ہے کہ کشمیر اور جوہری پروگرام پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہو سکتا، ان دونوں معاملات پر پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں کے درمیان مکمل اتفاق رائے ہے۔ اے پی پی اور ریڈیو پاکستان کو دیئے گئے پینل انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ کشمیر اور جوہری پروگرام پر کوئی بھی سیاسی جماعت یا لیڈر سمجھوتہ نہیں کر سکتا،یہ دونوں امور پاکستان کی تزویراتی پالیسیوں سے جڑے ہیں اور یہ پاکستان کی بنیاد اور نظریہ کے لئے ضروری ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کے 22 کروڑ عوام اپنے کشمیری بھائیوں کی جدوجہد آزادی میں ان کے ساتھ کھڑے ہیںاور وزیر اعظم عمران خان جو کہ کشمیریوں کے سفیر ہیں اور انہوں نے بھارت کے زیر قبضہ جموں وکشمیر کا مسئلہ ہر فورم پر اٹھایا ہے اور اس کے نتیجے میں اسلامی ممالک کی تنظیم او آئی سی،ترکی ایران اور ملائیشیا نے کشمیریوں کی صدا بلند کرنے کے لئے اہم کردار ادا کیا۔

اسی طرح اقوام متحدہ میں بھی اس حوالے سے سرگرمیوں میں اضافہ ہوا ہے اور 5 اگست 2019 کے بعدسلامتی کونسل میں اس تنازعہ پر تین اجلاس ہو چکے ہیں جو کہ حکومت پاکستان کی کوششوں کی وجہ سے ممکن ہوئے، دوسری طرف خطے میں امن اور سلامتی اس مسئلہ کے حل سے وابستہ ہے۔بھارت کی جانب سے 5 اگست کا یکطرفہ اقدام غیر قانونی اور خود بھارت کے آئین ،دوطرفہ معاہدوں اور عالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے اور پاکستان اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ستمبر کے وسط میں منعقد ہونے والے سربراہ اجلاس سمیت تمام عالمی فورمز پر یہ مسئلہ اٹھائے گا۔انہوں نے کہا کہ تنازعہ کشمیر کا حل نہ نکالا گیا تو یہ دنیا کے امن اور سلامتی کے بڑاخطرہ رہے گا اور یہ عالمی طاقتوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ مسئلہ کوپرامن حل کرائیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کا نیا سیاسی نقشہ حکومت کی ایک بہت بڑی کامیابی ہے اور اب یہ نقشہ دنیا کے بڑے چینلز پر دیکھا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ انڈیا کشمیریوں کے جذبہ آزادی کو کسی صورت غیر متزلزل نہیں کر سکتا۔انہوں نے کشمیریوں پر زور دیا کہ وہ پرعزم اور چوکس رہیں اور بھارتی ہائبرڈ اور ففتھ جنریشن وار سے متاثر نہ ہوں۔انہوں نے یقین دہانی کرائی کہ پاکستان کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کی حمایت کرتا رہے گااور ہم ہر حال میں آپ کے ساتھ کھڑے رہیں گے۔انہوں نے کہا کہ بھارے کو اس وقت خطے میں تنہائی کا سامنا ہے یہاں تک کہ ایسے ممالک جو بھارے کے قریب تصور ہوتے تھے انہوں نے بھی خطے میں اس کے توسیع پسندانہ عزائم پر تشویش کا اظہار کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ مودی کی فاشسٹ حکومت سے جوہری پاکستان کو کوئی خطرہ نہیں اور پاکستان کسی بھی قسم کی بھارتی مہم جوئی کا بھرپور جواب دینے کی صلاحیت رکھتا ہے جیسا کہ ماضی میں دے بھی چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت کو لداخ میں چین سے شرمناک شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے اور اسے یہ نصیحت ہے کہ ایسی غلطی نہ دہرائے۔انہوں نے کہا کہ مودی کی فاشسٹ حکومت کی جانب سے پورے بھارت میں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں جاری ہیں جو سیکولر بھارت کا منہ چڑا رہی ہیں۔بھارت کے غیر قانونی قبضہ اور 5 اگست کے اقدام نے اس کے براہ نام سیکولر چہرے کو بے نقاب کر دیا ہے اور رہی سہی کسر پاکستان اسے بے نقاب کر کے پوری کرے گا۔انہوں نے کہا کہ تنازعہ کشمیر اقوام متحدہ کے ایجنڈے پر ہونے کے باوجود سات دہائیوں سے حل طلب ہے۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ کشمیر کمیٹی دفتر خارجہ کے تعاون اور کشمیری تارکین وطن کے ساتھ مل کشمیر کا مسئلہ عالمی سطح پر اٹھاتا رہے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں