PM Imran Khan Press azad 16

وزیراعظم عمران خان کا احساس ایمرجنسی کیش پروگرام کے اجراءکی تقریب سے خطاب

مظفر آباد ۔  (ویب ڈیسک)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام کی جدوجہد آزادی کو طاقت کے زور پر دبایا نہیں جا سکتا، مودی کی انتہا پسند حکومت نے مسلمانوں پر ظلم کی انتہا کر دی، آر ایس ایس نے ہٹلر نازی کی سوچ کو اپنا رکھا ہے جو خود بھارت کی تباہی پر مبنی ہے، 5 اگست سے پہلے مسئلہ کشمیر کو پوری دنیا میں اجاگر کرنے کے لئے بھرپور تحریک کا آغاز کیا جائے گا،

حکومت لائن آف کنٹرول پر بھارتی فائرنگ سے متاثرہ خاندانوں کی ہر ممکن مدد جاری رکھے گی، احساس پروگرام کے تحت مالی معاونت کے علاوہ پورے آزاد کشمیر اور انضمام شدہ اضلاع میں تمام لوگوں کو صحت کارڈز بھی فراہم کئے جائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جمعہ کو یہاں لائن آف کنٹرول کے رہائشیوں کے لئے احساس ایمرجنسی کیش پروگرام کے اجراءکی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

اس موقع پر وزیراعظم نے مستحقین میں امدادی رقوم کے چیک تقسیم کئے، آزاد جموں و کشمیر کے صدر، وزیراعظم، وفاقی وزیر برائے امور کشمیر اور وزیراعظم کی معاون خصوصی ثانیہ نشتر بھی تقریب میں موجود تھیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہمیں لائن آف کنٹرول پر مشکل حالات میں زندگی گزارنے والے شہریوں کی مدد پر خوشی ہے،

احساس پروگرام کے تحت ایک لاکھ 38 ہزار خاندانوں کو امداد دی جائے گی جبکہ آزاد کشمیر میں 12 لاکھ خاندانوں کو صحت انصاف کارڈز فراہم کئے جائیں گے اور اس طرح پورے آزاد کشمیر میں تقریباً تمام لوگوں کو یہ سہولت میسر آئے گی جس کے ذریعے 10 لاکھ روپے تک علاج کرایا جا سکتا ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ صحت انصاف کارڈز انضمام شدہ اضلاع کے تمام افراد کو دیئے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ محدود وسائل کے باوجود آزاد جموں و کشمیر، انضمام شدہ اضلاع، بلوچستان اور گلگت بلتستان کے لئے ترقیاتی بجٹ میں اضافہ کیا ہے، اس سے فرق نہیں پڑتا کہ کہاں کس جماعت کی حکومت ہے، ہمارے لئے جتنا بھی ممکن ہو سکا ہم مدد کریں گے۔ وزیراعظم نے اس موقع پر مقبوضہ کشمیر کے عوام کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کشمیری عوام کی مکمل حمایت جاری رکھے گا۔

انہوں نے کہا کہ بھارت کی انتہا پسند حکومت نے مقبوضہ کشمیر میں ظلم کی انتہا کر دی ہے، نوجوان لڑکوں کو جیلوں میں بند کیا جا رہا ہے جبکہ پیلٹ گنز کا استعمال بھی جاری ہے، کشمیریوں پر 8 لاکھ فوج مسلط کر رکھی ہے، مودی حکومت نے منصوبہ بندی کے تحت مظالم جاری رکھے ہوئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کے اندر بھی مسلمان ظلم کا نشانہ بن رہے ہیں، آر ایس ایس ہٹلر کی نازی سوچ کی پیروکار ہے اور ہندو بالادستی کے نظریئے کے ساتھ مسلمانوں کے علاوہ عیسائیوں، سکھوں اور دیگراقلیتوں کو بھی دوسرے درجے کے شہری بنایا جا رہا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ یہ سوچ خود بھارت کی تباہی پر مبنی ہے اور اس بارے میں بھارت کے باشعور لوگ بھی فکر مند ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام کی تحریک آزادی کو طاقت کے زور پر نہیں دبایا جا سکتا، کشمیر کی تاریخ اس بات کی گواہ ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ میں نے کشمیریوں کا وکیل بن کر پوری دنیا میں ان کا مقدمہ پیش کیا جبکہ دنیا کو ہندوستان پر قابض خطرناک سوچ کے بارے میں بھی آگاہی دی۔

انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے یہاں آزاد مارچ کے نام پر ہماری اس تحریک کو سبوتاژ کرنے کی کوشش کی گئی، ہم نے مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر بھرپور طریقے سے اجاگر کرنے کا فیصلہ کیا، اس سلسلے میں 5 اگست سے قبل اندرون و بیرون ملک بھرپور تیاریاں کی جائیں گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں