Brick kiln close by district government 78

سات نومبر تا اکتیس دسمبر تک اینٹوں کے بھٹے بند

ننکانہ صاحب ( حاجی عبدالرزاق ) حکومت پنجاب کی ہدایت کے مطابق 07نومبر تا 31دسمبر تک اینٹوں کے بھٹوں کو بندرکھا جائے گا،ضلع بھر کی عوام کو ماحولیاتی آلودگی سے بچانے کے لیے حکومتی سطح پر بھرپوراقدامات کیے جارہے ہیں،اینٹی سموگ کنٹرول پروگرام کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے گی۔ان خیالات کا اظہار ڈپٹی کمشنر ننکانہ صاحب راجہ منصور احمد نے ماحولیاتی آلودگی اور سموگ کے خاتمہ کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کیا ۔

تفصیلات کے مطابق ڈپٹی کمشنر ننکانہ صاحب راجہ منصور احمد کی ہدایت پر اسسٹنٹ ڈائریکٹر ماحولیات عبدالقیوم نے ضلع بھر میں چلنے والے 27سے زائد اینٹوں کے بھٹوں کا معائنہ کیا۔اینٹوں کے بھٹوں کا معائنہ کرتے ہوئے اسسٹنٹ ڈائریکٹر ماحولیات عبدالقیوم نے سموگ کنٹرول پروگرام ایکٹ کی خلاف ورزی کرنے والے 14بھٹوں کو سیل کردیا جبکہ 7بھٹوں کے مالکان کے خلاف متعلقہ تھانوں میں ایف آئی آرز کا اندراج کروایا گیا۔ ڈپٹی کمشنر ننکانہ صاحب راجہ منصور احمد اینٹی سموگ پروگرام کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ حکومتی احکامات پر عملدرآمد کرتے ہوئے پرانی ٹیکنالوجی والے بھٹے چلانے کی ہرگز اجازت نہیں ہوگی صرف زگ زیگ ٹیکنالوجی والے بھٹہ جات کوکام جاری رکھنے کی اجازت ہوگی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سختی سے ایکشن لیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ محکمہ ماحولیات سمیت دیگر ضلعی افسران روزانہ کی بنیاد پر اینٹوں کے بھٹوں کو چیک کررہے ہیں اور جہاں حکومتی احکامات کی خلاف ورزی ثابت ہوتی ہے وہاں بھٹہ مالکان کے خلاف بھرپور کاروائی عمل میں لائی جارہی ہے ۔

ڈپٹی کمشنر راجہ منصور احمد نے کہا کہ کوڑا کرکٹ اور جھاڑیوں وغیرہ کو آگ لگانے سے دھواں اور ماحولیاتی آلودگی میں یقینی اضافہ ہو سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بڑھتی ہوئی ماحولیاتی آلودگی انسانی صحت کے لئے بھی خطرناک ہے اس لئے کوڑا کرکٹ اور گھاس جھاڑیوں کو آگ ہرگز نہ لگائی جائے جبکہ میونسپل کمیٹی بھی کوڑے کو جلانے کی بجائے دبا کر تلف کرنے کے فوری اقدامات کرے انہوں نے کہا کہ اس کام کو قومی فریضہ سمجھ کر ادا کیا جائے اور اس مقصد میں تمام محکمہ جات مل کر اپنے فرائض سرانجام دیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں